میں نے رب کو دیکھا ہے

Poet: Bint e Iqbal
By: Bint e Iqbal, Karachi

کیا تم نے رب کو دیکھا ہے
ہاں میں نے رب کو دیکھا ہے

جنگ کے میدان میں
بے سر و سامانی میں
کفار کے بھاری لشکر پر
چند سو مسلم حاوی ہوئے
تب میں نے رب کو دیکھا تھا

کیا تم نے رب کو دیکھا ہے
ہاں میں نے رب کو دیکھا ہے

جب ناؤ بھنور میں پھنس گیٰ
اور امید کی کوئی کرن نہیں
تب اس نے چلایا ہواؤں کو
اور ساحل سے ملایا مسافر کو
تب میں نے رب کو دیکھا تھا

کیا تم نے رب کو دیکھا ہے
ہاں میں نے رب کو دیکھا ہے

جب دنیا ساری عدو ہوئی
اور ظلم کا سکہ چل پڑا
تب بچایا اس باتدبیر نے
پھر سازش سب ناکام ہوئیں
تب میں نے رب کو دیکھا تھا

کیا تم نے رب کو دیکھا ہے
ہاں میں نے رب کو دیکھا ہے

جب رات کا اندھیرا گھیرا ہوا
اور آسمان سجا چاند تاروں سے
پھر سکوت چھایا خلقت پر
تب اس نے نکالا سورج کو
تب میں نے رب کو دیکھا تھا

کیا تم نے رب کو دیکھا ہے
ہاں میں نے رب کو دیکھا ہے

جب غفلت بھری تھی زندگی
تب حالت اضطراب میں
اک بار پکارا یا الله
پھر توبہ کے سب در کھلے
تب میں نے رب کو دیکھا تھا

کیا تم نے رب کو دیکھا ہے
ہاں میں نے رب کو دیکھا ہے


 

Rate it:
27 Oct, 2018

More Religious Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Bint e Iqbal
Visit 2 Other Poetries by Bint e Iqbal »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City