یاد آتا ہی رہا وہ بچھڑ کے

Poet: Sobiya Anmol
By: sobiya Anmol, Lahore

یاد آتا ہی رہا وہ بچھڑ کے
بچھڑ کے بھی رہا سر چڑھ کے

رُتِ خزاں آئی محبت پہ
شجر خالی ہوا جڑھ جڑھ کے

محبت کیا کی تھی اُس نے
گیا زنجیروں میں جکڑ کے

دو قدم نہ اپنی جگہ سے ہلا
اُس نے تھاما نہ بڑھ کے

یہ تحفۂ گلاب تو دیکھو ذرا
کیا بن گیا ہے سُکڑ کے

یہ رونا کس لیے ہے انمول
خوش ہے وہ تم سے اُکھڑ کے

زمانہ خوش کیا اُس نے
بات بات پہ یوں بگڑ کے

Rate it:
29 Oct, 2018

More Sad Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: sobiya Anmol
what can I say,people can tell about me... View More
Visit 128 Other Poetries by sobiya Anmol »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City