جو سزاوار ہے عشق تو ٹھہرا نہ ایک پل جائے

Poet: Sobiya Anmol
By: sobiya Anmol, Lahore

جو سزاوار ہے عشق تو ٹھہرا نہ ایک پل جائے
ہر فرد کا بارودِ محرومی عشق پہ نکل جائے

میں نے جو کہا ٗریکھا میں کوئی تبدیلی آئے
تو رنج یاس میںٗ یاس رنج میں بدل جائے

فکر کے انداز انوکھےٗ تردّد کے کیا ہی کہنے
فکر تردّد سے گرمائےٗ تردّد فکر سے جل جائے

بدحواس کیا اِک عمر سے ادھوری داستانوں نے
جان آئے تو پوری آئے ٗ جائےتو پوری جائے

مجھے گوارہ کیا داد واقعی بجا ہے صبرِ دہر کی
ورنہ کیسے کوئی وقت کے سانچے میں ڈھل جائے

Rate it:
30 Oct, 2018

More Sad Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: sobiya Anmol
what can I say,people can tell about me... View More
Visit 128 Other Poetries by sobiya Anmol »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City