چھُوا تلووں سے میں نے رستۂ دشوار کے سفر کو

Poet: Sobiya Anmol
By: sobiya Anmol, Lahore

چھُوا تلووں سے میں نے رستۂ دشوار کے سفر کو
تو پایا رگِ آگ ہیں لمحہ لمحہ بھی اِس نگر کے

پچھلے پہروں میں تم روتے دکھائی نہ دیئے تو کہنا
میری سوچ سے دیکھوٗ گزرے وقت سے گزر کے

باریک بینیوں سے تُو میری کبھی جا نہ پائے گا
تُو تحلیل ہے اِک اِک ذّرے میں میری نظر کے

اب تو دردِ جاں سے ہی سکون حاصل کیا جائے
مے بنائیے آنسوؤں میں خونِ رگِ نبض کو بھر کے

ضرورت ہے ناقص جیون کو قوی سہاروں کی
شانوں کو کاٹ لاؤ کسی توانا شجر کے

کھونا پانا ہی منتحب ہوا ہے ریکھاؤں سے
دو شگوفوں میں بٹے ہیں حصّے مجروح عمر کے

اِک اِک پَل میں نے نامِ زندگی کیا ہے
اور ہر پل کھویا ہے تجھے اِک اِک پَل ٹھہر کے

Rate it:
30 Oct, 2018

More Sad Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: sobiya Anmol
what can I say,people can tell about me... View More
Visit 128 Other Poetries by sobiya Anmol »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City