حریف تھا میرا مگر دِقّت ہوئی بھُلانے میں

Poet: Sobiya Anmol
By: sobiya Anmol, Lahore

حریف تھا میرا مگر دِقّت ہوئی بھُلانے میں
اِک عُمر گزری خود کو بلندی پر لے جانے میں

پہلے محبت کی رنگینیوں سے آراستہ تھا جیون
پھر مایوسیوں سے جا لگے اپنے اپنے ٹھکانے میں

وہ اُلجھنیں دیتا گیاٗ ہم شمار کرتے گئے
ہاتھ تھا اسی کا مجھے کامیاب بنانے میں

کچھ وقت نے بھی دئیے پھر سہارے ہم کو
کچھ ہم بھی کھو گئے جنگل کو جنت سا سجانے میں

رخصت کر دیں میں نے سب غم کی مجبوریاں
فلک سے ستاروں کو زمیں پہ لانے میں

ہر دن نئی گھبراہٹیںٗ ہر دن نئی آفتیں
جا ! مَیں نہیں آتی یہ دنیا بسانے میں

تم لاکھ کہو! ہم دل سے نہیں اُتریں گے
کچھ وقت تو لگے گا تمہیں یقیں دلانے میں

Rate it:
30 Oct, 2018

More Sad Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: sobiya Anmol
what can I say,people can tell about me... View More
Visit 128 Other Poetries by sobiya Anmol »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City