ظاہر تو ہاتھ میں کتاب لئے ہو

Poet: Akhlaq Ahmed Khan
By: Akhlaq Ahmed Khan, Karachi

ظاہر تو ہاتھ میں کتاب لئے ہو
پسِ پشت کوئی اور ہی نصاب لئے ہو

کیونکر ملت تیرے رہنمائی میں چلدے
ہاتھوں تم میں مغربی آفتاب لئے ہو

فروغِ رواجِ فرنگی اور اسلامی نظام
جناب آپ بھی چہرے پر نقاب لئے ہو

ترقی کی دوڑ میں رہا ملّا ہی نشانہ
کبھی خود سے بھی تم حساب لئے ہو

ارکانِ خمسہ سے مومن ہوئے لیکن
مجاہد کی طرح کہاں دلِ بیتاب لئے ہو

دشہت گردی ، جہاد ، غلبہ ، تفرقہ
کس قدر سوچوں میں تم گرداب لئے ہو

اخلاق سوال پر تیرے سوال کون کریگا
زباں پہ تم ہر بات کا جواب لئے ہو

Rate it:
01 Nov, 2018

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Akhlaq Ahmed Khan
Visit 83 Other Poetries by Akhlaq Ahmed Khan »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City