خوشیوں میں جینے کا خواب سوچ رکھا ہے

Poet: Sobiya Anmol
By: sobiya Anmol, Lahore

خوشیوں میں جینے کا خواب سوچ رکھا ہے
اور اُس پہ ملنے والا عذاب سوچ رکھا ہے

تُو ہر خوشی کا احساس ہے میرے لیے
مَیں دلٗ تجھے دل کا باب سوچ رکھا ہے

ہم آ شنا ہیں محبت کی نیکیاں کرنے کا
ملے گا کیا کیا ثواب ٗ سوچ رکھا ہے

یہ صدمے فرقت کے ٗ یہ لمحے جدائی کے
اِس وقت کو بڑا ہی نایاب سوچ رکھا ہے

جدائی کا ہر لمحہ مجھ پر زوال گزرتا ہے
تیرے ہجر کو بصورت روزِ حساب سوچ رکھا ہے

تُو کرتا جا بے رخی ٗ دیتا جا بے وفائی
ہم نے اس کا بھی جواب سوچ رکھا ہے

جب وقت ہمارا ہو گا ٗ تیرا مشکل گزارہ ہو گا
ہمیں چُننا ہے کیا ٗ انتخاب سوچ رکھا ہے

Rate it:
05 Nov, 2018

More Sad Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: sobiya Anmol
what can I say,people can tell about me... View More
Visit 128 Other Poetries by sobiya Anmol »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City