اپنا شمار تھوڑی ہے

Poet: اسماء طارق
By: Asma Tariq, Gujrat

 معجزے ہوا کرتے ہیں اسی دنیا میں
پر ایسوں میں اپنا شمار تھوڑی ہے
جن کے لوٹنے کی مانگتے تھے دعا
وہ چلے تو آئے ہیں اب یہ آہ کس لیے
زخم دنیا بھی رکھتی ہے ہرے
سارا دارومدار انہی پر تھوڑی ہے
سینچ کر رکھتے ہیں ہم غم بھی اپنے
مجال جو بانٹیں،اتنے سخی تھوڑی ہیں
سوچتا ہوں وہ آ کر سب ٹھیک کر دیں
پر وہ اللہ دین کا چراغ تھوڑی ہیں
ہاں کہیں تو صحیح گر نہ کر دیں تو خفا
آپ بھی کمال ہو ،ہم مشین تھوڑی ہیں
دوسروں پر اٹھاتی ہے انگلی دنیا ایسے
جیسے بھول گئی ہو ،خود انسان تھوڑی ہے
اکثر غلطی کر ہی جاتے ہیں، معاف کیجئے گا
انسان ہیں ،خطاکار ہیں،فرشتہ تھوڑی ہیں
اہل زبان تو ہمیشہ سے ہی راج کرتے ہیں دلوں پر
پر ان میں آس ہم سے زبان دراز تھوڑی ہیں

Rate it:
08 Nov, 2018

More Life Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Asma Tariq
Visit 3 Other Poetries by Asma Tariq »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City