محصور ہو چکی ہوں میں اپنے خیال دے

Poet: وشمہ خان وشمہ
By: وشمہ خان وشمہ, ملایشیا

محصور ہو چکی ہوں میں اپنے خیال دے
کتنے جواب قید ہیں بس اک سوال دے

کتنے رموز شوق ان آنکھوں میں رہ گئے
جن سے نگاہ دوست تھی وہ جمال دے

کھوئے ہوؤں کی یاد میں پر نم نہ ہو سکی
ان کی جبیں پہ خیر سے اک تو خیال دے

صدیاں ہماری راہ کو روکے کھڑی رہیں
اور زندگی گزرتی رہی ماہ و سال دے

بیتاب پستیوں سے نکل ہی نہ پائے ہم
کیا کیا بلندیاں تھیں کوئی بھی مثال دے

کتنا جئیں کہاں سے جئیں اور کس لئے
یہ اختیار ہم پہ ہے تقدیر اجال دے

آ ہی گئے ہیں خواب تو پھر جائیں گے کہاں
آنکھوں سے آگے ان کی کوئی بھی مثال دے

Rate it:
09 Nov, 2018

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: washma khan washma
I am honest loyal.. View More
Visit 4523 Other Poetries by washma khan washma »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City