درودیوار سجائے ہیں تیرے واسطے

Poet: Sobiya Anmol
By: Sobiya Anmol, Lahore

درودیوار سجائے ہیں تیرے واسطے
کتنے ہی آنسو گرائے ہیں تیرے واسطے

بھری دنیا میں تنہا خود کو کر ڈالا
سبھی لوگ بھلائے ہیں تیرے واسطے

لمحاتِ زندگی تو کب سے ختم کر دئیے
صبح و شام نبھائے ہیں تیرے واسطے

دیتے تو رنجش ہیں تیرے خطوط مگر
سینے سے چپکائے ہیں تیرے واسطے

محبت کی صحبت بھی بُری لگتی تھی
اِس حصار میں آئے ہیں تیرے واسطے

ستم پہ ستم دل معصوم پر جاری ہے
چراغِ اندوہ جلائے ہیں تیرے واسطے

رہتے تو نامکمل ہیں سدا سپنے میرے
یہ پلکوں پہ بٹھائے ہیں تیرے واسطے

نامِ کنارہ نہ کروں کہیں تجھ سے کبھی
اُمید کے پل بڑھائے ہیں تیرے واسطے

Rate it:
11 Nov, 2018

More Sad Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: sobiya Anmol
what can I say,people can tell about me... View More
Visit 128 Other Poetries by sobiya Anmol »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City