ہماری لبریز محبت کا ہمیں ثمر دیا ہوتا

Poet: Sobiya Anmol
By: Sobiya Anmol, Lahore

ہماری لبریز محبت کا ہمیں ثمر دیا ہوتا
ارمان و امید کو اُجلتا گھر دیا ہوتا

ساری عمر تو نہ مانگی تھی ہم نے
پیار ہمیں بس اِک ہی نظر دیا ہوتا

حقیقت نہ دے سکے ہمیں سکوں کی تم
سکوں کا سپنا ہی ہمیں او بے خبر دیا ہوتا

دو آنسو ہمارے لیے بھی بہا دیتے کبھی
ہم نے کب کہا ٗ خونِ جگر دیا ہوتا

لوگوں کی سنتے رہے تم ہر نئے دن
دھیان تھوڑا میری بھی بات پر دیا ہوتا

دنیا سنور جاتی تمہارے پیار سے ہماری
تم نے تحفۂ پیار ہمیں اگر دیا ہوتا

کاش آتا تمہیں ہم پر مر مٹ جانا
قدرت نے تمہیں چاہت کا گہر دیا ہوتا

یا کاش ملتا ہمیں بھی تم سا دل
خدا نے دلِ سنگدل یا بے اثر دیا ہوتا
 

Rate it:
11 Nov, 2018

More Sad Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: sobiya Anmol
what can I say,people can tell about me... View More
Visit 128 Other Poetries by sobiya Anmol »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City