کہاں پہ لے کے آگئی چلا رہے ہیں صبح و شام

Poet: وشمہ خان وشمہ
By: وشمہ خان وشمہ, ملایشیا

کہاں پہ لے کے آگئی چلا رہے ہیں صبح و شام
جدائیوں کے زخم وہ اٹھا رہے ہیں صبح و شام

وہی اداس روز و شب، وہی فسوں، وہی ہوا
امید وصل اشک ہی بہا رہے ہیں صبح و شام

وہ چھوٹی چھوٹی رنجشوں کا لطف بھی چلا گیا
تلاش میں جو سحرکی سدارہے ہیں صبح و شام

جدائیوں کے زخم دردِ زندگی نے بھر دیئے
مِلا نہیں تو کیا ہوا دکھا رہے ہیں صبح و شام

یہ کس خوشی کے موقعے پر غموں کی نیند آ گئی
خوشی کا چاند شام کو جلارہے ہیں صبح و شام

ترے وصال کا زمانہ یاد آ یا بارہا
مخل ہوئے نہ آکے تم سنا رہے ہیں صبح و شام

یہ کس خوشی کے موقعے پر غموں کی نیند آ گئی
خوشی کا چاند شام ہی دکھا رہے ہیں صبح و شام

ذرا سی دیر میں محبتیں سبھی بدل گئیں
کبھی نہ اپنے آپ کی وشم رہے ہیں صبح و شام
 

Rate it:
11 Nov, 2018

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: washma khan washma
I am honest loyal.. View More
Visit 4523 Other Poetries by washma khan washma »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City