صدائیں قید کروں میں صدا مخالف ہے

Poet: وشمہ خان وشمہ
By: وشمہ خان وشمہ, ملایشیا

صدائیں قید کروں میں صدا مخالف ہے
مہکتے جسم کی خوشبو مرا مخالف ہے

بلا کا شور ہے طوفان آ گیا شاید
کہاں کا رخت سفر جو ہوا مخالف ہے

تری امانتیں محفوظ رکھ نہ پاؤں گی
دوبارہ لوٹ کے آنا ترا مخالف ہے

یہ انتظار سحر کا تھا یا تمہارا تھا
دیا جلایا بھی میں نے ہوا مخالف ہے

میں چاہتی ہوں ٹھہر جائے چشم دریا میں
لرزتا عکس تمہارا نیا مخالف ہے

بیاض بھر بھی گئی اور پھر بھی سادہ ہے
تمہارے نام کو جو لکھا مخالف ہے

چلو یہ اچھا ہوا آنے والے طوفاں سے
بچے گی جان کہ وشمہ انا مخالف ہے

Rate it:
11 Nov, 2018

More Life Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: washma khan washma
I am honest loyal.. View More
Visit 4523 Other Poetries by washma khan washma »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City