باپ

Poet: پنچھی
By: Abdul wadood, Rabwah

وہ جو مہرباں میرے ساتھ تھا وہ نہیں رہا اب کیا کروں
وہ جو مجھ پہ کرم کا ہاتھ تھا وہ نہیں رہا اب کیا کروں

میری کیا خوشی میرا درد کیا کہوں اب بھلا میں قرب کیا
جسے کہتا سب جذبات تھا وہ نہیں رہا اب کیا کروں

میری دیر میرے سویر میں میری صبح میرے اندھیر میں
وہ جو جاگتا ہر رات تھا وہ نہیں رہا اب کیا کروں

جسے فکر تھی میری ہر گھڑی جسے خیال تھا میرا ہر پہر
وہ جو رکھتا سب خیالات تھا وہ نہیں رہا اب کیا کروں

اس بےبسی کے دیار میں غم زندگی کے ہسار میں
وہ جو میرے احساسات تھا وہ نہیں رہا اب کیا کروں

وہ جو میرا سایہ صبح بھی تھا اور راتیں جس سے تھی چاندنی
جسے خیال میرا شبو رات تھا وہ نہیں رہا اب کیا کروں

میں تو منزلوں کی تلاش میں راہوں پہ ہوں آ کر کھڑا
پر جو میری شروعات تھا وہ نہیں رہا اب کیا کروں

Rate it:
13 Nov, 2018

More General Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Abdul wadood
Visit 38 Other Poetries by Abdul wadood »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City