دھڑکنیں تو زندہ ہیں درمیاں نہیں کوئی

Poet: وشمہ خان وشمہ
By: وشمہ خان وشمہ, ملایشیا

کیا بتائیں اس کے بن ایسی جاں نہیں کوئی
دھڑکنیں تو زندہ ہیں درمیاں نہیں کوئی

میں اسے سمجھنے کے مرحلوں میں الجھی تھی
اس نے جانے کیا کیسے یہ کہاں نہیں کوئی

نیند کیوں نہیں آتی خواب خواب آنکھوں کو
شہر جاں میں ہر جانب یہ جہاں نہیں کوئی

نیند مانگتے پھرنے میں انا کا سودا تھا
اس انا میں خوابوں کی کہکشاں نہیں کوئی

ہونٹ تیرے پھولوں سے بات تیری خوشبو سی
روپ چاند سا تیرا دل آسماں نہیں کوئی

زعم اور انا کا ہم اور کیا گلا گھوٹیں
اس کا ہر کہا مانا مگر گماں نہیں کوئی

اس کے چھوڑ جانے پر کچھ نہ کچھ تو کرنا تھا
کچھ نہ کر سکے وشمہ مہرباں نہیں کوئی

Rate it:
16 Nov, 2018

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: washma khan washma
I am honest loyal.. View More
Visit 4523 Other Poetries by washma khan washma »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City