خوابوں میں ایک جشنِ طلب ہی شباب میں

Poet: وشمہ خان وشمہ
By: وشمہ خان وشمہ, ملایشیا

خوابوں میں ایک جشنِ طلب ہی شباب میں
پھیلا ہوا سکوت عجب ہی جواب میں

دریا کے پاس پیاس کی شدت بڑھا گئی
جس دھوپ میں، میں راہِ طلب کے حساب میں

یارانِ شہر پیار کے فرقوں میں بٹ گئے
اک میں اکیلی بت بنی سب اضطراب میں

وہ تو بچھڑ چکا تھا سرِ شام ہی مگر
اور ڈھلتی شب کا میں تو غضب یہ جناب میں

وہ ہی تو ایک عشق میں صحرا نشین تھا
آنکھوں میں جس کے قہر و غضب کے نصاب میں

آئے گا اب وہ لوٹ کے کیا آسمان سے
تاروں میں جس کا حَسب نسب ہے کتاب میں

اس راستے میں شہرِ تمنا نہ آئےگا
کیوں دن کے انتظار میں شب کے گلاب میں

آنکھوں میں نور ہاتھ میں جنبش نہیں مگر
وشمہ میں اپنے حال میں سب انتساب میں

Rate it:
17 Nov, 2018

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: washma khan washma
I am honest loyal.. View More
Visit 4523 Other Poetries by washma khan washma »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City