ادھر بھی ہے اُدھر بھی

Poet: م الف ارشیؔ
By: Muhammad Arshad Qureshi (Arshi), Karachi

اب شوقِ ملاقات ادھر بھی ہے اُدھر بھی
اشکوں کی یہ برسات ادھر بھی ہے اُدھر بھی

اب روز ملاقات کی خواہش ہوئی پیدا
سینے میں لگی آگ ادھر بھی ہے اُدھر بھی

مٹی کے بنے لوگ ہیں ہم ٹوٹ نہ جائیں
ہاں تیز یہ برسات ادھر بھی ہے اُدھر بھی

قسمت میں لکھا ہوگا تو مل جائیں گے اک دن
امیدِ ملاقات ادھر بھی ہے اُدھر بھی

انجان ہوئے ہم سے کیوں اتنا بھی نہ سوچا
یادوں کی حسیں رات ادھر بھی ہے اُدھر بھی

ایسے مرے جذبات سے کھیلا ہے انھوں نے
بدنام مری ذات ادھر بھی ہے اُدھر بھی

ہوتی ہے زمیں تنگ یہاں چل اور کہیں ارشیؔ
اللہ کی یہی ذات ادھر بھی ہے اُدھر بھی
 

Rate it:
27 Nov, 2018

More General Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Muhammad Arshad Qureshi
My name is Muhammad Arshad Qureshi (Arshi) belong to Karachi Pakistan I am
Freelance Journalist, Columnist, Blogger and Poet.​President of Internati
.. View More
Visit 180 Other Poetries by Muhammad Arshad Qureshi »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City