تاب نہیں

Poet: م الف ارشیؔ
By: Muhammad Arshad Qureshi (Arshi), Karachi

ان سے ملنے کی مجھ میں تاب نہیں
میری آنکھوں میں کوئی خواب نہیں

تم یہ جو کچھ بھی کہہ رہے ہو ناں
میری باتوں کا یہ جواب نہیں

میرے سارے سوال باقی ہیں
کیسے کہہ دوں کوئی حساب نہیں

دل میں اپنے اگر بسالے تو
ہم کو بھی کوئی اجتناب نہیں

دل کو اس کے لیے رلاتا ہے
خود سے کہتا ہے میں بے تاب نہیں

ایک اس کے سوا ہے کون مرا
اور وہ میرے لیے بے تاب نہیں

آؤ پھر بیٹھ کر کریں باتیں
بات اب بھی کوئی خراب نہیں

Rate it:
Views: 22

More General Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

Email
05 Dec, 2018
About the Author: Muhammad Arshad Qureshi
My name is Muhammad Arshad Qureshi (Arshi) belong to Karachi Pakistan I am
Freelance Journalist, Columnist, Blogger and Poet.​President of Internati
.. View More
Visit 162 Other Poetries by Muhammad Arshad Qureshi »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City