علمبردارِ حق کو عبرت کا ، نشاں کردو

Poet: اخلاق احمد خان
By: Akhlaq Ahmed Khan, Karachi

علمبردارِ حق کو عبرت کا ، نشاں کردو
چلی ہے رِیت کہ سچ کو بے ، زباں کردو

چشمِ لحاظ میں خوفِ خنجر اتار کر
جگر کو جزبہِ احساس سے ، ویراں کردو

خلافِ ظلم لب کشائی کو موت لکھ دو تم
تنگ دیں کے سپاہی پر زمین و ، آسماں کردو

آزادیِ اظہارِ رائے کے ہیلے بہانوں سے
نوجوانان ِ ملت کو ، بَد زباں کردو

تذبذب کا شکار ہوکر بدظن ہو بیٹھے
راہِ حق کے کھوجی کو یوں ، پریشاں کردو

مقصدِ قربانیِ آقا (ص) وہ جہد صحابہ کی
نظروں سے اوجھل وہ ہر اک ، داستاں کردو

اخلاق ِحریفِ دیں نے اب یہ تدبیر اپنائی ہے
مسلماں کے بچے کو عالم سے ، بدگماں کردو

Rate it:
17 Dec, 2018

More General Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Akhlaq Ahmed Khan
Visit 83 Other Poetries by Akhlaq Ahmed Khan »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City