کبھی شعر و نغمہ بن کے

Poet: نعمان صدیقی
By: Noman Baqi Siddiqi, Karachi

کبھی شعر و نغمہ بن کےکبھی آنسوؤں میں ڈھل کے وہ مجھے ملے تو لیکن، ملے صورتیں بدل کر
کی زمین پر

رنگ بدل رہے ہیں کام اور شغل کے
زمانہ ہے بڑا نازک چلنا ذرا سنبھل کے

ایک کوی رستہ لینا تو پڑے گا
تنگ آگیا ہوں رستے بدل بدل کے

قال کا ہے منظر حال کا نہ پوچھو
ڈھنگ مختلف ہیں قول اور عمل کے

مسکرا دیے تھے جو بات اس کی سن کے
لشکر تھے جو گزرے نزد وادی نمل کے

آس پاس گدلا تم رہو بس اچھے
پانی میں جو دیکھے پھول وہ کنول کے

سُنے نہ بھی کوی رہو تم گنگناتے
دِکھتے ہو تم نعمان آدمی غزل کے
 

Rate it:
17 Jan, 2019

More General Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Noman Baqi Siddiqi
Visit 61 Other Poetries by Noman Baqi Siddiqi »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City