قسمت

Poet: Seemab Aqil
By: Seemab Aqil, Hyderabad

قسمت کو میں نے ایسے ہی پایا ہے
انتظار کے لمحات میں بھی ٹرین کو چھوٹتے ہوئے پایا ہے
کبھی انجانے میں بھی ٹرین میں خود کو بیٹھے ہوئے پایا ہے
قسمت کو میں نے ایسے ہی پایا ہے
محبت کی طلب رکھنے والوں کو تنہا کھڑا ہوا پایا ہے
محبت پا لینے والوں کو بےغرض و بےنیاز ہجوم میں پایا ہے
قسمت کو میں نے ایسے ہی پایا ہے
پہاڑ کی طرح مضبوطی سے طوفانوں میں بھی کھڑا پایا ہے
کبھی بارش کی بوندوں کی طرح نرمی سے گرتے ہوئے پایا ہے
قسمت کو میں نے ایسے ہی پایا ہے
ہاں ! مانا کہ شکوے ہزار ہیں اس قسمت سے مجھے اپنی
شکایات بھی انہی سے ہے جس کو بس اپنا ہمراز پایا ہے
ہاں قسمت کو میں نے اپنا ،صرف اپنا ،بس اپنا رہبر پایا ہے
قسمت کو میں نے حسین بہت حسین بس حسیں پایا ہے

Rate it:
23 Jan, 2019

More Sad Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Seemab Aqil
Visit 4 Other Poetries by Seemab Aqil »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City