دکھ

Poet: م الف ارشیؔ
By: Muhammad Arshad Qureshi, Karachi

دل تو ملتا ہی نہیں ہاتھ ملاتا کیا ہے
دل میں ہیں رنجشیں تو گلے لگاتا کیا ہے

لوگ ضدی ہیں یہ بدلیں گے نہ سوچیں اپنی
اب یہاں پھر نئی دنیا تو بساتا کیا ہے

خود ہی کہتا ہے کہ مشکل ہے ملن اپنا پھر
روز تو خواب نئے مجھ کو دکھاتا کیا ہے

لوگ کہتے ہیں مجھے جب بھی یہاں دیوانہ
اپنے چہرے کو تو دنیا سے چھپاتا کیا ہے

کون کہتا ہے کہ پہچان نہ پاؤں گا تجھے
ایک چہرے پہ کئی چہرے سجاتا کیا ہے

جس نے اک بار پلٹ کر بھی نہ دیکھا تجھ کو
ان کی خاطر تو اب اشکوں کو بہاتا کیا ہے

کون ہوگا ترے غم میں یاں پریشاں ارشیؔ
یہ بے حس ہیں انہیں دکھ اپنے بتاتا کیا ہے
 

Rate it:
26 Jan, 2019

More General Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Muhammad Arshad Qureshi
My name is Muhammad Arshad Qureshi (Arshi) belong to Karachi Pakistan I am
Freelance Journalist, Columnist, Blogger and Poet.​President of Internati
.. View More
Visit 180 Other Poetries by Muhammad Arshad Qureshi »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City