الفتِ پیمبر کا غم بھی ابن آدم ہے

Poet: وشمہ خان وشمہ
By: وشمہ خان وشمہ, ملایشیا

الفتِ پیمبر کا غم بھی ابن آدم ہے
سیم و زر کی چاہت میں آنکھ میری پر نم ہے

شاعری بھی لاحاصل اور قلم بھی بد قسمت
نعتِ مصطفی جس نے پڑھی لی مرہم ہے

مَیں نے نعت گوئی کا جب سے ذوق پایا ہے
سر پہ میرے رحمت کا بے خودی کا عالم ہے

کوئی مانے نا مانے ہے یہی حقیقت اِک
عَرَقِ تن بھی ہے خوشبو گردِ راہ شبنم ہے

عطرو بوئے دنیا سے کیا غرض اُسے ہوگی
جانِ گلشن جنت کی جس کو مل گئی کم ہے

وشمہ غم نے گھیرا جب مجھ کو اے جہاں والو!
درد کی دوا پائی، دردِ بے دوا غم ہے

Rate it:
27 Jan, 2019

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: washma khan washma
I am honest loyal.. View More
Visit 4522 Other Poetries by washma khan washma »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City