ایک دنیا بسانا چاہتا ہوں

Poet: عبدالمعز
By: Ab Moiz, Faisalabad

ایک دنیا بسانا چاہتا ہوں
وہاں تنہا رہنا چاہتا ہوں
بھیڑ میں دم گھٹتا ہے میرا
میں ویرانے کو آباد کرنا چاہتا ہوں

ایک دم میں ہر سانس بوجھ ہے
ہر لمحہ میرے لئیے روگ ہے
ساتھ چھوڑنا چاہتا ہوں
زندگی!! منہ موڑنا چاہتا ہوں

کبھی خود سے ہوں ناراض کبھی باطل سے
کبھی مے میں ہوں گم کبھی انا پرست
ہر تہمت سر پہ لینا چاہتا ہوں
ہر الزام تراشیوں کی سننا چاہتا ہوں

میں بیہودہ بدتر بے لگام نارسا ہوں
سخت برائیوں میں گھرا سا ہوں
اپنی بیخ کنی کرنا چاہتا ہوں
خود کو برباد کرنا چاہتا ہوں

تیرے لمس سے جو لذتیں ملیں
یہ مسرتیں پھر کہیں نا ملیں
ان کو مسرور پینا چاہتا ہوں
ہاں تا عمر پینا چاہتا ہوں
 

Rate it:
29 Jan, 2019

More Sad Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Ab Moiz
Visit 2 Other Poetries by Ab Moiz »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City