کسی بے مہر لمحے کی ادا پر مسکرانا ہے

Poet: Aneela Khan
By: Asghar Baig, Birmingham

کسی بے مہر لمحے کی ادا پر مسکرانا ہے
مجھے بھی آج اپنے حوصلے کو آزمانا ہے

اُسے ملنے کی ہر اک بات سے پہلو بچانا ہے
ابھی تو میں نے اپنی خواہشوں کا دل دکھانا ہے

مری چاہت نہین بدلی مرے حالات بدلے ہیں
مجھے حالات کا سورج سرِ آنچل سجاناہے

ارے یہ دیکھئے قسمت وہیں سے لوٹ آئے ہیں
جہاں سب منزلوں نے جا کے اپنا سر جھکا نا ہے

ابھی ہیں صبر کی باتیں ابھی ہیں جبر کی باتیں
نجانے کب تلک یونہی ہمیں غم کو نبھانا ہے

ابھی تو آشنائے درد کرنا ہے تمہیں میں نے
تمہاری روح کو اک کرب کا محشر دکھانا ہے

بڑے اک حّوصلے کی آج شب مجھ کو ضرورت ہے
عُروسانہ زیبائش میں اُنہیں چہرہ دکھانا ہے

مرے لمحوں کے ہر سُر میں تری آواز آتی ہے
تمہی کہہ دو مرے ساجن تمہیں کیسے بھلا نا ہے

میں اُس کو پا نہیں سکتی وہ میرا ہو نہیں سکتا
انیلہ میں نے دل کو یہ بھی اک صدمہ سنانا ہے
 

Rate it:
01 Feb, 2019

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Asghar Baig
Visit Other Poetries by Asghar Baig »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City