گہری خاموشی کو آخر توڑنا اچھا لگا

Poet: Aneela Khan
By: Asghar Baig, Birmingham

گہری خاموشی کو آخر توڑنا اچھا لگا
جھیل کے پانی میں پتھر پھینکنا اچھا لگا

ھم مخالف سمت کے اک موڑ پر ٹکرا گئے
اور اِک دوجے کی جانب دیکھنا اچھا لگا

کیا تروتازہ ھوَے اوراقِ ماضی کھول کے
بعد مدت پاس اْس کے بیٹھنا اچھا لگا

باتوں باتوں میں کئ شکوے زباں تک آ گئے
اور پھر آنکھوں میں آنسو تیرنا اچھا لگا

کیا بلا کا سحر تھا اُس رات کا جس رات میں
لطف موسم نے دیا اک سامنا اچھا لگا

زںدگی بھر ایک ہی طرزِ عمل اچھا نیہں
چُپ بھی اچھی تھی مگر اب بولنا اچھا لگا

زندگی کا بانکپن اِھلِ محبت کے لیے
اِک قبائے بند تھا جو کھولنا اچھا لگا
 

Rate it:
01 Feb, 2019

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Asghar Baig
Visit Other Poetries by Asghar Baig »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City