بچے

Poet: Rizwana waqar
By: Rizwana waqar, Lahore

بچے بھی سزا دیتے ہیں
پہن کے بت انا کا
وہ فرض اپنا بھلا دیتے ہیں

نشہ جوانی کا بہت ظالم
بڑھاپے کو بتا دیتے ہیں

تم نے کیا کیا میرے لئے
آنسو خوں کے رلا دیتے ہیں

سنبھل کر بات کر مجھ سے
عقل کو بےعقل بنا دیتے ہیں

نہ چٹھی نہ فون ، عجب
پیار کو ایذا دیتے ہیں

مہنگائی ہے بہت اماں
کما کے خود ہی اڑا دیتے ہیں

ہیں اب بھی تابعدار پر
بہت کم، وفاوں کا صلہ دیتے ہیں

وقت کہاں ان کے پاس
انٹرنیٹ، گوگل، بیوی بچے پر لگا دیتے ہیں

ماں کیا ہے پوچھ اویس قرنی سے

دعاوں کا خزانہ ہے انہیں کے لئے
ماں باپ یہی صدا دیتے ہیں
 

Rate it:
02 Feb, 2019

More Life Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: rizwana waqar
Visit 143 Other Poetries by rizwana waqar »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City