چراغ

Poet: Asad
By: Asad, mpk

 یوں ہی امیدوں کے چراغ تم جلائے رکھنا
کسی کی یاد کو اپنے سینے سے لگائے رکھنا

پیار جگنو ھے جھلملائے گا ایک دن
اندھیرہ چھٹ جائے گا امید بندھائے رکھنا

یے بھی نشانی ھیں یار اپنی محبت کی
پھول کتابوں میں اپنی تم چھپائے رکھنا

اس کی مرضی ھے اگر یار جفا کرتا ھے
تم اپنا عہد وفا یوں ہی نبھائے رکھنا

عشق کی بھٹی میں جلنا یار آسان نہیں
جؤلہ بننے تک یوں ہی خود جلائے رکھنا

تھام رکھنا اپنے دل کو ذرا قابو سے
ذرا سی جدائی پر نہ آنسو بہائے رکھنا

ھے اسد نام کا بھوکا نہ کسی شہرت کا
تیرہ دیوانہ ھے بس دیوانہ اسے بنائے رکھنا

Rate it:
03 Feb, 2019

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Asad
Visit 48 Other Poetries by Asad »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City