سمیٹ کیوں نہیں لیتے مجھے اپنی بانہوں میں

Poet: Muhammad Tanveer Baig
By: Muhammad Tanveer Baig, Islamabad

سمیٹ کیوں نہیں لیتے مجھے اپنی بانہوں میں
بھلا پنچھی بھی رکتے ہیں اڑنے سے ہواؤں میں

کھڑا جو کر گئے ایسے دہ راہے پر مجھے ظالم
نہیں معلوم ملے گا کیا جزاؤں میں سزاؤں میں

ہاتھوں کی لکیروں میں جو لکھا وہ ہو گا بھی
مگر دکھنا یہ باقی ہے اثر کتنا دعاؤں میں

دکھاوا بھی نہیں ھوتا ملامت بھی نہیں کرتے
جسے دکھتا ہو بس ہمدم وہ کیا رکھے نگاہوں میں

Rate it:
06 Feb, 2019

More Sad Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Muhammad Tanveer Baig
Visit 50 Other Poetries by Muhammad Tanveer Baig »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City