عیاں ہونے لگا

Poet: م الف ارشیؔ
By: Muhammad Arshad Qureshi, Karachi

زندگی کا فلسفہ کھل کر عیاں ہونے لگا
یوں میں موت اور زندگی کے درمیاں ہونے لگا

دیکھتا ہوں اب میں ان کو غیروں کے بھی روبرو
ساری چاہت کا مری پھر یوں زیاں ہونے لگا

کچھ مسائل کے سبب ہم کو بجھڑنا کیا پڑا
ان کے دل میں راز تھا جو وہ عیاں ہونے لگا

تھا اگر یہ جرم تو وہ بھی شریکِ جرم تھا
جان تھا پہلے وہ جو اب جانِ جاں ہونے لگا

چھوڑ دے گا وہ بھی مجھ کو اور لوگوں کی طرح
جانے کیوں اب دل کو میرے یہ گماں ہونے لگا

کیں تو تھیں کوشش بہت پر رائیگاں سب ہی ہوئیں
درد تھا جتنا بھی دل میں سب عیاں ہونے لگا

کب تلک ارشیؔ رہو گے بے حسوں کے درمیاں
دوست ہی دشمن تمہارا اب یہاں ہونے لگا
 

Rate it:
06 Feb, 2019

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Muhammad Arshad Qureshi
My name is Muhammad Arshad Qureshi (Arshi) belong to Karachi Pakistan I am
Freelance Journalist, Columnist, Blogger and Poet.​President of Internati
.. View More
Visit 180 Other Poetries by Muhammad Arshad Qureshi »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City