حسن تو لاجواب ہوتا ہے

Poet: وشمہ خان وشمہ
By: وشمہ خان وشمہ, ملایشیا

عشق خانہ خراب ہوتا ہے
حسن تو لاجواب ہوتا ہے

اس کو پڑھتی ہیں وقت کی آنکھیں
جس کا چہرہ کتاب ہوتا ہے

بن کے بہتا ہے آنکھ میں دریا
آدمی کا جو خواب ہوتا ہے

کوئی کھلتا ہے سرخ گلشن میں
کوئی کالا گلاب ہوتا ہے

تیرے آنے سے اب تو ہر جانب
موسموں پر شباب ہوتا ہے

اس میں بہتے ہیں درد کے موتی
آنکھ میں جو چناب ہوتا ہے

جس میں تصویر ہو تری وشمہ
خوبصورت وہ باب ہوتا ہے

Rate it:
10 Feb, 2019

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: washma khan washma
I am honest loyal.. View More
Visit 4523 Other Poetries by washma khan washma »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City