اُجڑنے کو ہے جہاں ، جہاں کو بچا تو

Poet: اخلاق احمد خان
By: Akhlaq Ahmed Khan, Karachi

اُجڑنے کو ہے جہاں ، جہاں کو بچا تو
بچتا نہیں جہاں تو ، ایماں کو بچا تو

علی الاعلان رحمٰن کی حکم عدولیاں
گِر نہ پڑے زمیں پر ، آسماں کو بچا تو

حفاظت اپنے گھر کی تو پرندے بھی کرتے ہیں
بِکھرتے ہوئے کسی کے ، آشیاں کو بچا تو

انسانوں کے روپ میں یہاں بھیڑئیے بھی ہیں
چھوڑ کر اُن کو ، انساں کو بچا تو

جہاں یکجا ہو مسلماں وہ ڈھونڈے نہیں ملتے
ملے جو تجھ کو ایسے ، آستاں کو بچا تو

بے دینی کے گِدھ نوچیں گے تجھے بھی
جائےایماں ہے دل اُس ، جاں کو بچا تو

تقاضہ جو کر رہا ہے وہ ، اُس کو نبھائیے
نہیں ذمّے میں تیرے کہ ، قرآں کو بچا تو

بے جا استعمال اس کا خسران ہے
کلامِ بے سود سے ، زباں کو بچا تو

مسلماں جو مٹ گیا تو کافر بھی نہ رہے گا
خود دشمن بنا ہے اپنا ، ناداں کو بچا تو

دنیا ہی کو جنت کرنے میں لگا ہے
آخرت کے لئے بھی کچھ ، ارماں کو بچا تو

اخلاق دین کے لئے تجھے وقت کہاں ہے
نوکری کو بچا تو ، دُکاں کو بچا تو

Rate it:
21 Feb, 2019

More Religious Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Akhlaq Ahmed Khan
Visit 83 Other Poetries by Akhlaq Ahmed Khan »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City