پہن کر جمہوری قبا یہ کیسا جمہوری نظام دیتے رہے

Poet: نواب رانا ارسلؔان
By: نواب رانا ارسلؔان, Umerkot

پہن کر جمہوری قبا یہ کیسا جمہوری نظام دیتے رہے
ستم گر یہاں درد سرِ عام دیتے رہے

تم تو رہے سطوت میں اے اعضائے مجالِس
میں کیوں مانوں؟ کہاں چمن کو اچھی پہچان دیتے رہے

ناموسِ دينِ مصطفىٰ کے یہ کیسے ہیں محافظ
مفلِس کی جھونپڑی میں لگی آگ کو پروان دیتے رہے

بازارِ عالم تک مشہور ہیں ان کے بیانات صرف بیانات
دہایوں سے یہ اہلِ باغ کو نقصان دیتے رہے

گلِ چمن تو بیچتے رہے سڑکوں پہ پانی
تم کس کو روٹی کپڑا اور مکان دیتے رہے

لٹتی رہیں کلیاں سرِ بازار یہاں
تاسف ہے اہلِ تجاہل کیا شان دیتے رہے

ایسی تلخیوں میں آرزوئے خواب کیا کرے ارسلؔان
رُسوائی یہاں روزوشب بے درد انسان دیتے رہے

Rate it:
24 Feb, 2019

More Sad Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: نواب رانا ارسلؔان
Visit 28 Other Poetries by نواب رانا ارسلؔان »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City