میرے لوگ

Poet: Zaryab Fatima
By: Zaryab, sargodha

میرے دیس کے لوگ بھی عجب فقیر ہیں
سراپا الفت ہیں امن کی تصویر
بے لگام خواہشوں نے پکڑ رکھا ہے ورنہ
موج بے کراں ہیں آپ اپنی تقدیر ہیں
نفرتوں میں گھرے کچھ شفیق لوگ ہیں
محبتوں کا سمندر ہیں اقبال کی تعبیر ہیں
جسے آج تک نہ تسخیر کرسکاکوئی
وہ آہنی دیوارہیں فولادی شمشیرہیں
کئی طوفان بھی انکے قدم ڈگمگا نہ سکے
موج بے کراں ہیں آپ اپنی تقدیر ہیں
نفرتوں میں گھرے کچھ شفیق لوگ ہیں
محبتوں کا سمندر ہیں اقبال کی تعبیر ہیں
جسے آج تک نہ تسخیر کرسکاکوئی
وہ آہنی دیوارہیں فولادی شمشیرہیں
جراتوں کا نشان ہیں زخموں کی تاثیرہیں
جن کی داستان حیات بھی اک خونی تحریر ہے
وہی پیکر شجاعت ہیں وہی میرا عنوان تقریر ہیں

Rate it:
28 Feb, 2019

More General Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Zaryab
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

وہ ہی میرا عنوان ہ وہ ہی میری تحریر ہیں

By: Uzma, Lahore on Mar, 20 2019

Like many poets and writers, this poet of five hundred
years ago likes to slip in an extra gag here and there.

By: tahira, Mandi on Mar, 06 2019

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City