دل کے زخم

Poet: طاہر عزیز چوہدری
By: Tahir Aziz, Sarai alamgir

دل کے زخموں کو دھاگے میں پرویا بھی تو جا سکتا تھا
زندگی کے سفر میں سب کچھ کھویا بھی تو جا سکتا تھا

لوگوں کے سامنے غم بیاں کرنے سے بہتر تھا ؟؟
چادر غم کو اوڑھ کہ سویا بھی تو جا سکتا تھا

آنکھوں میں نئے خواب سجانا کوئی ضروری تو نہیں تھا ؟
پرانے آنسوؤں سے آنکھ کو بھگویا بھی جا سکتا تھا

دریا کی گہرائی سے گبھرانے والے ملاح
کاغذ کی کشتی پہ پار ہویا بھی جا سکتا تھا

تھمارا یوں ضبط کرنا آخر جان لے بیٹھا نہ " طاہر
کسی دیوار سے لگ کے رویا بھی جا سکتا تھا
 

Rate it:
01 Mar, 2019

More Sad Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Tahir Aziz
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City