اگر بُرا ہوں میں تو میرے خیال کیوں دیکھتے ہو

Poet: نواب رانا ارسلان
By: نواب رانا ارسلان, Ismailabad, Umerkot

اگر بُرا ہوں میں تو میرے خیال کیوں دیکھتے ہو
اگر نہیں ہے مدعا کوئی، تو یہ چہرہ لال کیوں دیکھتے ہو

چاہتا ہوں کہ کوئی چاہے مجھے، دیکھ کر میرا حال شکستہ
شکستِ دل ہے اب، تم بکھرے بال کیوں دیکھتے ہو

ہوس تو یہ ہے کہ اب نہیں ہے کوئی ہوس
زندان تو میں ہوں، تم میرا حال کیوں دیکھتے ہو

ہاں آزاری میں ہوں میں فراقِ نگار کے بعد
تم تو آنکھیں بند کرلو، تم مجھے سنسان کیوں دیکھتے ہو

میں بدل جاؤں گا تم رازِ دل کہہ کر تو دیکھو
کہیں وقت گزر نہ جائے، تہی دست انسان کیوں دیکھتے ہو

فوائد دنیا سے کیا ہوگا، اتمنانِ جان کیوں دیکھتے ہو
تم دلِ نادان کو دیکھو، افلاسِ ارسلان کیوں دیکھتے ہو

Rate it:
01 Mar, 2019

More Urdu Ghazals Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: نواب رانا ارسلان
Visit 28 Other Poetries by نواب رانا ارسلان »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City