تم ذکر مصطفىٰ کی بات کرتی ہو

Poet: Bushra babar
By: Bushra babar, Islamabad

تم ذکر مصطفىٰ کی بات کرتی ہو
کیا محمد کے 'م' کو بھی بیاں کر سکتی ہو

جس نے طائف کے بازاروں میں لہو اپنا بہایا ہے
کیا ان لہو کے قطروں کو بیاں کر سکتی ہو

جس نے دین کی خاطر خود کو لٹایا ہے
کیا اس محبوب کی محبت کو بیاں کر سکتی ہو

لفظوں کو جوڑ کر تم نعت مصطفىٰ تو پڑھتی ہو
کیا اس ہستی کو لفظوں میں بیان کر سکتی ہو

اس نادان عقل سے ماورا ان کی ہستی ہے
کیا محبوب خداوند کو بیاں کر سکتی ہو

یاد مصطفىٰ میں آنکھ سے جو بہتے رہے آنسوؤں
کیا ان آنسوؤں سے تم اپنی محبت بیاں کر سکتی

تم ذکر مصطفىٰ کی بات کرتی ہو
کیا محمد کے 'م' کو بھی بیاں کر سکتی ہو

Rate it:
02 Mar, 2019

More General Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Bushra babar
Visit 55 Other Poetries by Bushra babar »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City