میں کسے کہوں کیا کیا یہاں ستم ہوتے ہیں

Poet: نواب رانا ارسلان
By: نواب رانا ارسلان, Ismailabad, Umerkot

میں کسے کہوں کیا کیا یہاں ستم ہوتے ہیں
یوں ہی آزادی سے ہم یہاں چشمِ زخم ہوتے ہیں

تو ہمیں بتا اپنے غم جو دیے ستم گر نے یہاں
ہم بھی تو اہلِ غم ہوتے ہیں

جو کہہ دوں انجمن میں کہ چلو حق کے لیے نکلیں
تو یوں ہی چپ یہاں اہلِ بزم ہوتے ہیں

اِس گنجینہ کی چابی تو تختِ نشیں کے پاس ہے
یاں یہ کہہ دو کہ اِس پر بھی ہم ہوتے ہیں

یہ کون آتا ہے راتوں کو گنجینہَ ء چمن میں
ہم جو بولیں تو ہم ہی فردِ جرم ہوتے ہیں

ہمارے بیانِ درد پر بھی کوئی داد دے دو
ہم بھی تو اہلِ سُخن ہوتے ہیں

عیش و آرام میں رہے تم اور تمہارے لال
رُسواہ تو یہاں گلِ چمن ہوتے ہیں

اُسے کیا رنج افلاس زدوں کی حالت کا
جو اپنے ہی آرائش و جمال میں مگن ہوتے ہیں

تُو باغی ہے ارسلان ، اگر جو حق پہ تیری زبان کُھلی تو
بے زبان تو یہاں حُبِ وطن ہوتے ہیں

Rate it:
02 Mar, 2019

More Urdu Ghazals Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: نواب رانا ارسلان
Visit 28 Other Poetries by نواب رانا ارسلان »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City