چراغ امید

Poet: Asad
By: Asad, mpk

 چراغ امید تم یوں ہی جلائے رکھنا
امید پر دنیا قائم ھے امید بندھائے رکھنا

پیار جگنو ھے دیکھنا جھلملائے گا اک دن
اندھیرے چھٹ جائیں گے آس لگائے رکھنا

یہ بھی نشانیان ھیں چند یار محبت کی
پھول کتابوں میں اپنے تم چھپائے رکھنا

اسکی مرضی ھے اگر وہ یار جفا کرتا ھے
تم عہدء وفا اپنے یوں ہی نبھائے رکھنا

عشق کی بھٹی میں جلنا کچھ آسان نہیں
جوالہ بننے تک خود یوں ہی تم جلائے رکھنا

یادء ماضی سے کوئی سیکھ لینا سبق ھمدم
کہ حال کو یون ھی نہ سینے سے لگائے رکھنا

ھے اسد نام کا بوکھا نہ کسی شہرت کا
تیرا دیوانہ ھے بس اسے دیوانہ نائے رکھنا

Rate it:
07 Mar, 2019

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Asad
Visit Other Poetries by Asad »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City