مریضِ عشق کی خاطر دعا کرے نہ کرے

Poet: وشمہ خان وشمہ
By: وشمہ خان وشمہ, ملایشیا

ہجومِ شوق میں خود سے جدا کرے نہ کرے
یہ اس کی مرضی ہے مجھ کو رہا کرے نہ کرے

مریضِ عشق کسی طور بچ نہ پائے گا
مریضِ عشق کی خاطر دعا کرے نہ کرے

مجھے تو رکھنا پڑے گا رفاقتوں کا بھرم
وہ میرا دوست ہے چاہے وفا کرے نہ کرے

میں سوگوار رہوں گی کسی کی فرقت میں
محبتوں کا کوئی حق ادا کرے نہ کرے

شکست کھا کے بھی رہتی ہوں مطمئن اکثر
کوئی بھی جشنِ طرب وہ بپا کرے نہ کرے

میں پھنس گئی ہوں تلاطم کی تیز لہروں میں
میں کیا کروں کہ مدد ناخدا کرے نہ کرے

Rate it:
08 Mar, 2019

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: washma khan washma
I am honest loyal.. View More
Visit 4523 Other Poetries by washma khan washma »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City