تو واقف ہے ہمارے دلوں سے ۔ ۔ ۔

Poet: Bushra babar
By: Bushra babar, Islamabad

تو واقف ہے ہمارے دلوں سے مالک
یہ تیرا گھر ہے تو ہے اس کا مالک

یہ محبتیں ،یہ نفرتیں وقتی ہیں ساری
بس تیرا عشق ہے جو ازل سے ہے دائمی

اصل بات یہ ہے ،کی تقوی ہے ایماں ہے جس کے دل میں
وہی ہے مومن وہی بندہ حق ہے

غافل ہیں تیری یاد سےاور نام کے مسلماں ہیں
دل ہے کالے، من ہیں میلے پھر بھی انسان کہلاتے ہیں

ہے غیبت زباں پر منافقت ہے دلوں میں
طلب ہے دیدار کے ان کی اور خواہش ہے جنت اعلی کی

کچھ تو خیال کر اے بنی آدم ،نکل دنیا کی مستی سے
اک دن قضا بھی آنی ہے اور پھر تجھے لوٹ کےجانا ہے

عمل کچھ تو کر لے اس جہاں فانى میں اے غافل
کل خالی ہاتھ کس منہ سے منزل اول میں جاے گا

وہ ہے مہربانوں کا مہرباں، یہ ہے اس کی اعلی ظرفی
مگر کچھ تو تو بھی خیال کر اے خطا کاروں کے خطا کار

تیری خلوتوں کو وہ جانتا ،تیری جلوتوں کو وہ جانتا
ناداں تو کس گماں میں ہے،وہ تیرے لمحوں سے ہے با خبر

Rate it:
08 Mar, 2019

More Religious Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Bushra babar
Visit 9 Other Poetries by Bushra babar »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City