خدایا !یہ کیسی زندگی ہے

Poet: Bushra babar
By: Bushra babar, Islamabad

خدایا
یہ کیسی زندگی ہے
تھک گئی ہوں جیتے جیتے
بس مجھ سے اب نہیں ہوتا
کب تک اور صبر کروں
کب تک اور جینا ہے
کب تک خود کو سمجھاوں
بہت مشکل ہے زندگی
سنو مجھ سے نہیں ہو گا
بس یہ شام ڈھل جاۓ
اور یہ پتہ ہی کٹ جائے
مجھے بس دور جانا ہے
بہت ہی دور جانا ہے
اس زندگی کی مستی سے
اوراس دنیا کی بستی سے
ان انسانوں کی ہستی سے
ان جسموں کے پتلوں سے
کسی روحوں کی دنیا میں
جہاں کوئی دل بھی نہ ٹوٹے
جہاں احساس مر جائیں
جہاں ہر شحص اکیلا ہو
جہاں خاموشی ہر سو ہو
جہاں کوئی راستہ نہ ہو
جہاں ہر چیز تھم جائے
جہاں نہ کوئی خواہش ہو
جہاں نہ کوئی ارماں ہو
جہاں پہ کچھ بھی فرض نہ ہو
جہاں پہ کوئی قضانہ ہو
جہاں سب کچھ ازل سے ہو
جہاں سب کچھ ابد تک ہو
جہاں کچھ بھی فنا نہ ہو
بس صرف خاموشی چھا جائے
اور پھر دل سکوں میں آجائے

Rate it:
11 Mar, 2019

More General Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Bushra babar
Visit 9 Other Poetries by Bushra babar »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City