ملت

Poet: م الف ارشیؔ
By: Muhammad Arshad Qureshi, Karachi

کاش اچھے ہی یہ سب اہلِ سیاست ہوتے
ایک ملت کی یہ جو سب ہی علامت ہوتے

کس کی ہمت تھی کوئی ان کو جھکا سکتا تھا
یہ تو دشمن کے لیے باعثِ دہشت ہوتے

کس طرح توڑ کے فرقوں میں ہمیں بانٹا ہے
اک جگہ ہوتے تو کتنی بڑی طاقت ہوتے

اب بھی سوچو کہ اگر خود کو سنبھالا ہوتا
اس طرح تو نہ کبھی قابلِ نفرت ہوتے

سب نے پرکھوں کے جو اطوار کو سمجھا ہوتا
دنیا کی نظروں میں تم قابلِ عزت ہوتے

یوں نہ ملت پہ ستم ڈھاؤ ذرا ہوش کرو
تم نے دیکھا نہیں فرعون کو عبرت ہوتے

تم نے دیکھی ہے بس اپنی ہی یہ شان و شوکت
ہم نے دیکھی ہے شہنشاہوں کی ذلت ہوتے
 

Rate it:
27 Mar, 2019

More General Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Muhammad Arshad Qureshi
My name is Muhammad Arshad Qureshi (Arshi) belong to Karachi Pakistan I am
Freelance Journalist, Columnist, Blogger and Poet.​President of Internati
.. View More
Visit 180 Other Poetries by Muhammad Arshad Qureshi »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City