ریگِ رواں و ، سراب ایک کر دو نا

Poet: اخلاق احمد خان
By: Akhlaq Ahmed Khan, Karachi

ریگِ رواں و ، سراب ایک کر دو نا
تقدیر میں میری ، عذاب ایک کردو نا

میری مسافتوں کو بھی تسکینِ جاں ملے
ہم نشین و ہم ، رکاب ایک کر دو نا

مجھے ٹالنے کے تمہارے پاس کتنے بہانے ہیں
شاٸع تم ، کتاب ایک کر دو نا

اقتدار سے پہلے جو امیدیں دلاٸ تھیں
پوری کوٸ ، جناب ایک کر دو نا

چاہتے ہو گر غریب کے حق میں بھی برتری
ملک کا تعلیمی ، نصاب ایک کر دو نا

رعایا کو شبُہ ہے شاہ کے یقین پر
کُھل کر کبھی ، خطاب ایک کردو نا

اخلاق جب سب ہی فرقوں کے خلاف ہیں
تو مسجد ، ممبر و ، محراب ایک کر دو نا

Rate it:
03 Apr, 2019

More General Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Akhlaq Ahmed Khan
Visit 83 Other Poetries by Akhlaq Ahmed Khan »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City