ہم تیرا ذِکر نہیں کرتے کیا؟

Poet: UA
By: UA, Lahore

ہم تیرا ذِکر نہیں کرتے کیا؟
ہم تیری فِکر نہیں کرتے کیا؟
ہم صبح شام نہیں لیتے کیا؟
ہم تیرا نام نہیں لیتے کیا؟

کِسلئے سایہءِ دِیوار ہوئے؟
رو بہ آ‏ئینہ شرمسار ہوئے
تیری فرقت میں گرفتار ہوئے
صِرف تیرے ہی طلبگار ہوئے
پِھر بھی ہم غیر شمار ہوئے
تیری محفل میں ہمی خوار ہوئے
دامنِ شوق تھامنے والے
آخرش غم سے تار تار ہوئے

ستم پہ کج ادائیوں پر بھی
تیری بے اعتنائیوں پر بھی
جفاؤں بے وفائیوں پر بھی
صبر سے کام نہیں لیتے کیا؟

ہم صبح و شام نہیں لیتے کیا؟
ہم تیرا نام نہیں لیتے کیا؟
ہم تیرا ذکر نہیں کرتے کیا؟
ہم تیری فِکر نہیں کرتے کیا؟
 

Rate it:
12 Apr, 2019

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: uzma ahmad
sb sy pehly insan phr Musalman and then Pakistani
broad minded, friendly, want living just a normal simple happy and calm life.
tmam dunia mein amn
.. View More
Visit 2824 Other Poetries by uzma ahmad »

Reviews & Comments

پِھر بھی ہم غیر میں شمار ہوئے
تیری محفل میں ہمی خوار ہوئے

By: Uzma, Lahore on Apr, 16 2019

پِھر بھی ہم غیروں میں شمار ہوئے
تیری محفل میں ہمی خوار ہوئے

By: Uzma, Lahore on Apr, 14 2019

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City