وہ کبھی میرا ہمسفر تھا

Poet: رعنا کنول
By: Rana Kanwal, Islamabad

وہ کبھی میرا ہمسفر تھا
ہم نوا تھا ہم خیال تھا
مگر یہ کیا میرے غموں میں اسی کا کمال تھا

وہ ہنستا روتا چھوڑ کر ایسا گیا تھا
پلٹ پوچھا ہی نہیں حال میرا کیا تھا
حال بے حال ایسا کر گیا تھا
خوشی کو ترسو دعا ایسی دے گیا تھا
جیت اپنی کا جشن وہ مانا رہا تھا
ایک عجیب خمار اسکی نظر میں نظر آ رہا تھا
انا کی چوٹ کا درد بے انتہاء تھا
اس درد کے شور کا مزہ وہ اٹھا رہا تھا
منزل اپنی کی راہیں وہ بدل چکا تھا
ان راہوں کی منزل کا پتہ صرف اسے پتا تھا
میری بے بسی کے عالم میں اسکا اندازے ستم بہت نرالا تھا
چل دیا کسی اور کے سنگ جس سے کیا وفا کا وعدہ تھا

وہ کبھی میرا ہمسفر تھا
ہم نوا تھا ہم خیال تھا
مگر یہ کیا کنول تیرے غموں میں اسی کا کمال تھا
 

Rate it:
22 Apr, 2019

More Sad Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Rana Kanwal
Visit 19 Other Poetries by Rana Kanwal »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City