امید وفا توڑا ہے کسی نے

Poet: رعنا کنول
By: Raana Kanwal, Islamabad

آنسو رخسار میں بھگویا ہے کسی نے
ہم سے ناتا توڑا ہے کسی نے
بنا کے خاک چھوڑا ہے کسی نے
امید وفا توڑا ہے کسی نے

دل کے ارمانوں کو کھریدا ہے کسی نے
زخموں کے تار کو چھڑا ہے کسی نے
ادھورا کر کے تنہا کیا ہے کسی نے
امید وفا توڑا ہے کسی نے

بیچ منزل میں لا کے چھوڑا ہے کسی نے
عشق کی تاریکیوں میں ڈبویا ہے کسی نے
پیار کی دھل کو پیھنکا ہے کسی نے
امید وفا توڑا ہے کسی نے

وعدوں کو وفا نہ کیا ہے کسی نے
محبّت کی تپتی ریت پر چلتا چھوڑا ہے کسی نے
گلاب عشق کے کانٹوں سے چھلی کیا ہے کسی نے
کنول امید وفا توڑا کسی نے
 

Rate it:
21 May, 2019

More Sad Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Raana Kanwal
Visit 19 Other Poetries by Raana Kanwal »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City