ہم نے قسمت کے مخالف جو اشارے دیکھے

Poet: Imtiaz Ali Gohar
By: Imtiaz Ali Gohar, Glasgow

ہم نے قسمت کے مخالف جو اشارے دیکھے
دوست اک پل میں بدلتے ہوئے سارے دیکھے

وہ جو ہر گام پہ ہمراہ چلا کرتے تھے
ٹوٹتے ایسے کئی ہم نے سہارے دیکھے

ہم نے خود چھیڑ لیا روح کے سب زخموں کو
اب بھلا کس سے کہیں درد ہمارے دیکھے

تم نے اک ہجر گزارا تو اُسے پا ہی لیا
ہم نے ہر بار محبت میں خسارے دیکھے

اپنی آنکھوں سے کروں پیار کہ ان میں اکثر
عکس لہراتے ہوئے ہم نے تمہارے دیکھے

آج بھی دل میں چمکتے ہیں ستارے بن کر
جو بھی آنکھوں نے مدینے میں نظارے دیکھے

اب کے برسات میں وہ جوش میں آیا دریا
ہم نے پانی میں کئی بار کنارے دیکھے

ساتھ جب اُس کا ملا تھا تو سفر میں گوہر
ہم نے ہمراہ کئی چلتے ستارے دیکھے

Rate it:
15 Jun, 2019

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Imtiaz Ali Gohar
Visit 2 Other Poetries by Imtiaz Ali Gohar »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City