جو شام و سحر

Poet: وشمہ خان وشمہ
By: وشمہ خان وشمہ, اسلام آباد

جو شام و سحر وفا کے نگر میں رہتا ہے
وہ میرا پیار ہے قلب و جگر میں رہتا ہے

وہ ایک شخص جو مجھ سے ملا نہیں برسوں
خدا گواہ ہے میری نظر میں رہتا ہے

وہ جس کی ایک ہی خواہش پہ زندگی دے دی
اسی کا رنگ مری چشمِ تر میں رہتا ہے

جو میرے اشکوں کے دریا سے آشنا ہی نہیں
عجیب شخص ہے پانی کے گھر میں رہتا ہے

وہ میری سوچ کے آنگن کو چھاؤں دے کیسے
غمِ حیات کا سایہ شجر میں رہتا ہے

میں کیسے چاند کو اپنا بناؤں گی وشمہ
مرے نصیب کا تارا سفر میں رہتا ہے

Rate it:
09 Jul, 2019

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: وشمہ خان وشمہ
Visit Other Poetries by وشمہ خان وشمہ »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City