"تمغہ"

Poet: Muqadas Majeed
By: Muqadas Majeed, Kasur

میٹھے پھل کے وعدے پر
صبر کا پہلو تھامے ہوئے
ظلم و ذیادتی کے باوجود
چپ کے روزے رکھے میں نے
ستم ظریف اپنوں کو
بندگی کے سجدے کرتی رہی
اپنی خوشیوں کی ننھی تھیلی سے
میں زکوٰۃ بھی دیتی رہی
پھر حاکم محرموں کے کعبے کے
ہزاروں طواف کرتی رہی
اپنی خواہش اڑان سے
میں کڑا جہاد کرتی رہی

قبل اس کے کہ سنگ تیرے
افق پار اڑ جاؤں
اے فرشتہء اجل، میری بات سن
مجھے دو گھڑی کی مہلت دے
جس کا وعدہ یہ
صدیوں سے کرتا آیا ہے
مجھے اس سماج سے آج
وہ تمغہ تو لینے دے

Rate it:
22 Jul, 2019

More Life Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Muqadas Majeed
Visit 9 Other Poetries by Muqadas Majeed »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City